ہانگ کانگ نے اب 150 ممالک کے ٹرانزٹ مسافروں پر پابندی لگا دی ہے۔

ہانگ کانگ نے اب 150 ممالک کے ٹرانزٹ مسافروں پر پابندی لگا دی ہے۔
ہانگ کانگ نے اب 150 ممالک کے ٹرانزٹ مسافروں پر پابندی لگا دی ہے۔

ہانگ کانگ ایئرپورٹ اتھارٹی کے ترجمان نے کہا کہ COVID-19 وائرس کے پھیلاؤ کے زیادہ خطرہ والے ممالک سے سفر کرنے والے ایئر لائن کے مسافروں کو 16 جنوری سے 15 فروری 2022 تک ہانگ کانگ کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے ذریعے منتقلی یا نقل و حمل کی اجازت نہیں ہوگی۔

"انتہائی متعدی کے پھیلاؤ کو کنٹرول کرنے کے لئے اوسمرون COVID-19 کی مختلف شکل اور ہوائی اڈے کے عملے اور دیگر صارفین کے تحفظ کو مزید مضبوط بنانے کے لیے، 16 جنوری سے 15 فروری تک، مسافروں کی منتقلی/ٹرانزٹ خدمات ہانگ کانگ بین الاقوامی ہوائی اڈ .ہ۔ کسی بھی شخص کے لیے جو گزشتہ 21 دنوں میں گروپ اے کی مخصوص جگہوں پر ٹھہرے ہیں جیسا کہ حکومت نے بیان کیا ہے، انہیں معطل کر دیا جائے گا۔

گروپ اے ممالک کی فہرست اس وقت تقریباً 150 ریاستوں پر مشتمل ہے، جن میں امریکہ، جاپان، برطانیہ، کینیڈا، آسٹریلیا، روس اور دیگر شامل ہیں۔ تمام ممالک جہاں کم از کم ایک اوسمرون پایا گیا کیس خود بخود اس فہرست میں شامل ہو جاتا ہے۔

"مخصوص جگہوں کے دوسرے گروپوں، مین لینڈ [چین] اور تائیوان کے مسافروں کے لیے منتقلی/ٹرانزٹ خدمات متاثر نہیں ہوتی ہیں۔ مذکورہ اقدام کا تازہ ترین وبائی صورتحال کے مطابق جائزہ لیا جائے گا،" ترجمان نے مزید کہا۔

ہانگ کانگ کو فی الحال اومیکرون تناؤ کے پھیلاؤ سے وابستہ پانچویں کورونا وائرس انفیکشن لہر کے خطرے کا سامنا ہے۔ حکام کی ہدایت کے مطابق 7 جنوری سے کھیل، ثقافتی اور تفریحی سہولیات کو ایک پندرہ دن کے لیے بند کر دیا گیا تھا۔

ہانگ کانگ بین الاقوامی ہوائی اڈ .ہ۔ ہانگ کانگ کا مرکزی ہوائی اڈا ہے، جو چیک لاپ کوک جزیرے پر دوبارہ حاصل کی گئی زمین پر بنایا گیا ہے۔ ہوائی اڈے کو چیک لیپ کوک انٹرنیشنل ایئرپورٹ یا چیک لیپ کوک ایئرپورٹ کے نام سے بھی جانا جاتا ہے، تاکہ اسے اپنے پیشرو، سابق کائی ٹاک ایئرپورٹ سے ممتاز کیا جا سکے۔

پرنٹ چھپنے، پی ڈی ایف اور ای میل

متعلقہ خبریں